بلوچستان ہائیکورٹ کی جانب سے گیس بلوں میں آدر چارجز کالعدم قرار

0

کوئٹہ : بلو چستان ہا ئی کورٹ کے چیف جسٹس جنا ب جسٹس نعیم اختر افغان اور جسٹس جناب جسٹس روزی خان بڑیچ پر مشتمل بنچ نے سوئی سدرن گیس کمپنی کی جا نب سے صا رفین کو گیس بلوں میں بھیجے جا نے والے (OTHER CHARGES)آدر چارجز کو کا لعدم قرار دیتے ہو ئے کہا ہے کہ مذکو رہ چا رجز آ ئین کے آ رٹیکلز4،5 اور 13سے متصادم ہیں۔یہ حکم عدالت نے ممتاز قانون دان درخواست سید نذیر آ غا ایڈووکیٹ، سلطا نہ ثروت ایڈووکیٹ اور فرزانہ خلجی ایڈووکیٹ کی جا نب سے دائر آ ئینی درخواست کا فیصلہ سنا تے ہو ئے دیا۔گزشتہ روز درخواست گزار سید نذیر آغا ایڈووکیٹ،ایس ایس جی سی کے وکیل کا شف حنیف ایڈووکیٹ اوگرا کے سید جعفر با قری ایڈووکیٹ، نما ئندہ مہر اللہ مری و دیگر عدالت کے روبرو پیش ہو ئے عدالت نے اپنے فیصلے میں سوئی سدرن گیس کمپنی کی جا نب سے صا رفین کو گیس بلوں میں بھیجے جا نے والے (OTHER CHARGES)آدر چارجز کو کا لعدم قرار دیتے ہو ئے کہا ہے کہ مذکو رہ چا رجز آ ئین کے آ رٹیکلز4،5اور 13سے متصادم ہیں درخواست گزاران کی جا نب سے دائر کئے گئے آ ئینی درخواست میں مو قف اختیار کیا گیا تھا کہ23دسمبر 2021 کو عدالت عالیہ کے دو رکنی بنچ نے سوئی سدرن گیس کمپنی کی جا نب سے صارفین کو بھیجے جا نے والے پی یو جی /سلو میٹر چارجز کو خلا ف قانون اور کالعدم قرار دیاجس کے بعد کمپنی نے ما ہ جنوری 2022اور فروری 2022 کے گیس بلوں میں اسی نو عیت کے (OTHER CHARGES)آدر چارجز بھیجنا شروع کر دئیے ہیں درخواست گزاران کا موقف ہے کہ (OTHER CHARGES)آدر چارجزآ ئین کے آ رٹیکل 4،5اور آ رٹیکل 13کی خلا ف ورزی ہے مذکو رہ آرٹیکلز ڈبل چارجز کی وصولی اور ڈبل سزا سے روکتے ہیں مگر گیس کمپنی پھر بھی صارفین کو نت نئے چارجز بھیج رہی ہے جوآ ئین و قانون اور بنیا دی انسانی حقوق کی خلا ف ورزی ہے،تما م صارفین کو مورد الزام ٹھہرا کر پی یو جی /سلو میٹر چا رجز اور(OTHER CHARGES)آدر چارجزبھیجنا درست نہیں عدالت اس سلسلے میں احکامات صادر کرے، جس پر عدالت نے گزشتہ روز فیصلہ سنا تے ہو ئے سوئی سدرن گیس کمپنی کی جا نب سے بلوں میں بھیجے جا نے والے (OTHER CHARGES)آدر چارجز کو کا لعدم قرار دے دیا۔اس موقع پر سید نذیر آغا ایڈووکیٹ کا کہنا تھا کہ عدالتی فیصلہ حق و سچ کی جیت ہے اس سے گیس صارفین کو ریلیف ملے گی اور انہیں نت نئے چا رجز سے چھٹکا رہ حاصل ہو گا

Leave A Reply

Your email address will not be published.